|Gilgit Urdu News|myGilgit.com|

اکتوبر 22, 2008

چینی انجینئرزکی سکیورٹی کےلئے سینکڑوں مشتبہ افراد علاقہ بدر

Filed under: Gilgit Urdu News — mygilgit @ 1:28 شام
Tags: , , ,

گلگت( کے ٹواخبار) ایس پی گلگت علی شیر نے کہا ہے کہ شمالی علاقوں میں کام کرنے والے چینی انجینئرز کی حفاظت کو یقینی بنانے کیلئے شمالی علاقوں کی پولیس نے اہم اقدامات کئے ہیں اورپولیس نے اب تک شاہراہ قراقرم سے تین سو مشتبہ افراد کو علاقہ بدرکردیاہے جبکہ پولیس نے گلگت شہر میں نامکمل کاغذات پر چلنے والی گاڑیوں کو قبضے میں لیکر ان گاڑیوں کی رجسٹریشن کے حوالے سے تحقیقات شروع کردی ہیں انہوںنے کے پی این کوایک انٹرویو میں بتایا کہ گلگت شہر کو کسی بھی ممکنہ تخریب کاری سے محفوظ کرنے اور شمالی علاقوں میں کام کرنے والے چینی انجینئرز کی حفاظت کویقینی بنانے کیلئے حکومت کی ہدایت پر گلگت شہر میں داخل ہونے والے راستوں پر باقاعدہ چیک پوسٹیں قائم کی گئی ہیں ایک چیک پوسٹ شاہراہ قراقرم پر چھموگڑھ کے بالمقابل قائم کی گئی ہے جبکہ دوسری چیک پوسٹ ہنیزل کے مقام پر قائم کی گئی ہے انہوںنے بتایا کہ شاہراہ قراقرم پر قائم چیک پوسٹ میں راولپنڈی ¾ پشاور اور ملک کے دیگر شہروں سے گلگت آنے والے تمام مسافروں کے شناختی کاغذات چیک کئے جاتے ہیں اور بغیر پاسپورٹ یا شناختی کارڈ کے آنے والے مسافروں بالخصوص افغان مہاجرین کو مذکورہ چیک پوسٹ سے واپس بھجوادیا جاتا ہے اور گذشتہ ایک ہفتے میں تین سو مشتبہ افراد کو واپس بھجوادیا گیاہے انہوںنے ایک سوال کے جواب میں بتایا کہ پاسپورٹ رکھنے والے غیر ملکیوں کے گلگت شہر میں داخلے پر کوئی پابندی نہیں ہے انہوں نے ایک سوال کے جواب میں اگرکوئی افغان مہاجر محکمہ داخلہ سے راہداری لیکر آتا ہے تو اسے ہم شہر میں داخل ہونے کی اجازت دے دیتے ہیں انہوں نے کہا کہ گلگت شہر میں صوبہ سرحد اور قبائلی علاقوں سے تعلق رکھنے والے افراد کے حوالے سے بھی گلگت پولیس نے کارروائی کی ہے اور ان تمام لوگوں کو علاقہ بدر کیا گیا ہے جن کے پاس کوئی شناختی کارڈ دستاویز نہیں تھی انہوں نے کہاکہ جن لوگوں کے پاس قومی شناختی کارڈ دیا پاسپورٹ موجود ہیں ہم نے ان کے خلاف کوئی کارروائی نہیں کی ہے اور اب بھی صوبہ سرحد اور قبائلی علاقوں سے تعلق رکھنے والے سینکڑوں افراد گلگت میں کاروبار کررہے ہیں پولیس ان لوگوں کے خلاف کارروائی کررہی ہے جن کے پاس کوئی بھی شناختی دستاویز نہیں ہے۔

Leave a Comment »

ابھی تک کوئی تبصرہ نہیں.

RSS feed for comments on this post. TrackBack URI

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

WordPress.com پر بلاگ.

%d bloggers like this: