|Gilgit Urdu News|myGilgit.com|

اپریل 29, 2009

گلگت ، خصوصی عدالت نے قتل کے 2ملزموںکوپھانسی کی سزاسنادی

Filed under: Gilgit News — mygilgit @ 4:18 شام

گلگت ( کے ٹو) انسداد دہشت گردی کورٹ نمبر 1کے جج راجہ شہبازخان نے قتل اوراقدام قتل کاجرم ثابت ہونے پر 2ملزموں کوپھانسی جبکہ ایک ملزم کو عمر قید کی سزا سنائی ہے اگست2005ءمیں ہنزل اورہرپون کے درمیان بارگو سے گلگت شہر آنے والی ڈاٹسن پرفائرنگ کرکے ایک شخص کو قتل جبکہ4افراد کوزخمی کرنے کے الزام میں پولیس نے تین افراد کو گرفتار کرکے تفتیش مکمل کرنے کے بعد چالان راجہ شہازخان کی عدالت میں پیش کیا تھا انسداد دہشت گردی کورٹ نمبر1 کے جج راجہ شہباز خان نے وکلا کے دلائل سننے کے بعد سماعت مکمل ہونے پرپیر کے روز اس کیس کا فیصلہ سناتے ہوئے احسان اللہ ولد آذر خان اوررحمت امین ولد میون ساکنان بارگو ضلع گلگت کو سزائے موت اوردس دس سال قید بامشقت جبکہ غیر قانونی اسلحہ رکھنے کے جر م میں مزید7،7 سال قید بامشقت کے ساتھ ساتھ ایک ایک لاکھ روپے کاجرمانہ بھی سنایا ہے جرمانہ کی عدم ادائیگی کی صورت میں مزید ایک ایک سال قید کی سزا کاٹنا ہوگی اس کیس کے ایک اورملزم شیر نواز ولد ہارون ساکن بارگو کو عمر قید کی سزا اور تین لاکھ روپے کاجرمانہ عائد کیا ہے نیز اقدام قتل کے جرم میں مزید10سال قید بامشقت کی سزا سنائی ہے عدالت نے ان تینوں ملزموں پر اقدام قتل کے جرم میں مزید ایک ایک لاکھ روپے کا جرمانہ عائد کیا ہے عدم ادائیگی کی صورت میں مزید 6ماہ قید سخت کاٹنا ہوگی واضح رہے کہ2005 میں تھانہ سٹی گلگت میں مسمی حاجت علی کی درخواست پرزیر دفعات 302\304\34 ppc-6/7 A T A اسلحہ آرڈیننس کے تحت ملزمان رحمت امین ، احسان اللہ اورشیر نواز کے خلاف مسمی شہزاد خان ولد محمد ایوب ساکن بارگو کے قتل جبکہ مسمان جعفر علی ، اسرارحسین ، وجاہت حسین اورتعارف حسین کو فائرنگ کرکے شدید زخمی کرنے کے الزا م میں ایف آئی آر درج کی گئی پولیس کی تفتیش مکمل ہونے پر مذکورہ ملزمان کے خلاف چالان عدالت میں پیش کیاگیا مقدمے کے اندارج کے بعد ملزمان احسان اللہ اوررحمت امین اورشیرنواز کے خلاف عدالت میں باقاعدہ سماعت جاری رہی اورملزمان کے خلاف استغاثہ کے تمام گواہان کے بیانات قلم بند کئے گئے تمام گواہوں کے بیانات اوراستغاثہ کی روشنی میں مذکورہ بالا ملزمان کے خلاف جرم ثابت ہونے پر انسداد دہشت گردی کی عدالت کے جج راجہ شہباز خان نے سزا کاحکم سنا دیا ملزمان کی طرف سے حاجی جمال خان ایڈووکیٹ نے مقدمے کی پیروی کی جبکہ سرکار کی جانب سے سپیشل پبلک پراسکیوٹر رحم گل اورنائب خوالدار زمان عدالت میں پیش ہوئے اوراستغاثہ کی جانب سے پرائیویٹ کونسل امجد حسین ایڈووکیٹ نے دلائل دئیے تھے سزا سناتے وقت ملزمان کمرہ عدالت میں موجود تھے۔

1 تبصرہ »

  1. it,s v good attemp 2 make people aware from local news.coaay on bst wishes

    تبصرہ از mehboobhussain — مئی 25, 2009 @ 5:26 صبح | جواب دیں


RSS feed for comments on this post. TrackBack URI

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

WordPress.com پر بلاگ.

%d bloggers like this: