|Gilgit Urdu News|myGilgit.com|

جون 8, 2009

گلگت بلتستان میں 26آئی ٹی سنٹراسی ماہ بندہوجائیںگے، ہزاروںطلباءوطالبات کامستقبل تاریک ہونے کاخدشہ

Filed under: Gilgit News — mygilgit @ 5:17 صبح

گلگت(کے ٹو)محکمہ تعلیم شمالی علاقہ جات کے ذمہ دارحکام کی عدم توجہ غلط منصوبہ بندی اورمحکمانہ بدنظمی کے باعث شمالی علاقوں میں5سال قبل قائم کئے گئے 26آئی ٹی سنٹرز رواں ماں (جون )میںبند کئے جارہے ہیں جس کے نتیجے میںہزاروں طلبہ وطالبات اور52اساتذہ کامستقبل تاریک ہونے کاخطرہ پیدا ہوگیا ہے باخبرذرائع سے معلوم ہوا ہے کہ مختلف اضلاع میں قائم 26آئی ٹی سنیٹرزمحکمہ تعلیم کے ذمہ دارحکام کی غفلت، عدم توجہ اورغلط منصوبہ بندی کی وجہ سے ماہ جون کے آخرمیں بندکیے جارہے ہیں ان سینٹرزمیںتعینات 52ملازمین کوگذشتہ 4ماہ سے تنخواہوں کی ادائیگی بھی روک دی گئی ہے گلگت بلتستان کے مختلف اضلاع میں سرکاری تعلیمی اداروں میں5سال قبل منسٹری آف انفارمیشن ٹیکنالوجی نے کروڑوں روپے خرچ کرکے 26آئی ٹی سینٹرزکاقیام11ستمبر2004کوعمل میں لایاتھا اس سلسلے میں 52ملازمین کوتعینات کیاگیا منصوبے کے آغازکے وقت ملازمین کوبتایا گیا کہ مستقبل میں یہ منصوبہ مستقل کردیاجائے گا لیکن محکمہ تعلیم کے ذمہ دارحکام نے اپنی نوعیت کے اس اہم منصوبے کوسنجیدگی سے نہیں لیا اوراس کی صحیح منصوبہ بندی پرتوجہ نہ دی بلکہ اس منصوبے کومحکمہ کیلئے ایک اضافی بوجھ قراردیتے رہے اورآئی ٹی پروجیکٹ میں ڈائریکٹرسمیت دیگراعلیٰ عہدوں پرنہیں کیاگیا جس کے نتیجے میں گزرتے وقت کے ساتھ یہ منصوبہ حقیقی معنوں میں ترقی کرنے کے بجائے تنزلی کاشکارہوکررہ گیا 5برس قبل ان 26آئی ٹی سینٹرزکے قیام پرکروڑوں روپے خرچ کئے گئے ایک سینٹرپر15لاکھ روپے سے زائدرقم خرچ کی گئی اورہرسینٹرمیں2رکنی عملہ تعینات کیاگیا ان26سینٹرزسے سکول اورکالجوں کے ہزاروں طلبہ وطالبات آئی ٹی کی تعلیم حاصل کررہے ہیں ذرائع کے مطابق ذمہ دارحکام کی عدم توجہ کی وجہ سے سینٹرزکیلئے بجٹ کے حصول کیلئے ملازمین عملی کوشش کرتے رہے جبکہ ذمہ دارحکام اس مقصد کیلئے مختص فنڈزسیروتفریح پرخرچ کرتے رہے جس کے نتیجے میں یہ اہم منصوبہ تباہی سے دوچارہوکررہ گیا دوسری طرف فنڈزکی عدم فراہمی کے نتیجے میں یہ سینٹرزرواں ماں کے آخرمیںبندکئے جارہے ہیں اس صورتحال کے باعث سرکاری تعلیمی اداروں میں زیرتعلیم ہزاروں طلبہ وطالبات آئی ٹی کی تعلیم سے محروم اور52رکنی سٹاف بے روزگار ہوجائینگے۔

Leave a Comment »

ابھی تک کوئی تبصرہ نہیں.

RSS feed for comments on this post. TrackBack URI

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

WordPress.com پر بلاگ.

%d bloggers like this: