|Gilgit Urdu News|myGilgit.com|

جون 28, 2009

گلگت میں نوجوان پولیس تشددسے ہلاک

Filed under: Gilgit News — mygilgit @ 8:47 صبح

گلگت(رضوان علی) گلگت پولیس کے تشدد کے نتیجے میں ایک نوجوان کی ہلاکت کے واقعے کے خلاف گلگت شہر میں زبردست احتجاج کیا گیا شہر میں نوجوانوں کی مختلف ٹولیوں نے جگہ جگہ پتھر ڈال کر رکاوٹیں کھڑی کرکے اور جابجا ٹائر جلا کر شہر کے داخلی اور خارجی راستوں سمیت اندرون شہر کی تمام رابطہ سڑکوں کو بند کردیا جس کی وجہ سے پورا گلگت شہر مفلوج ہوکررہ گیا 10روز تک پولیس اور دیگر اداروں کے شدید اور انسانیت سوز تشدد کا نشانہ بننے والے جعفر آباد نگرgilgit2 کے24 سالہ نوجوان صادق علی نے خوفناک تشدد کی تاب نہ لاتے ہوئے پولیس کی ہی کی تحویل میں ہفتہ کی صبح ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال میں دم توڑ دیا واقعے کی اطلاع ملتے ہی ہسپتال جاکر لاش کا معائنہ کرنے والے مقامی صحافیوں کے مطابق صادق علی کے جسم کے نازک حصوں سمیت مختلف جگہوں پر شدید تشدد کے باعث زخموں کے متعدد نشانات واضح طورپر نظر آئے 13 جون کو سول سیکرٹریٹ کے ملازم انور جان کے قتل کے بعد صادق علی کو17 جون کو خزانہ روڈ گلگت سے گرفتار کرکے عدالت سے10روزکا جسمانی ریمانڈ حاصل کرلیا گیا تھا تاہم صادق علی کی خفیہ مقام پر تفتیش کی گئی اور دوران تفتیش صادق علی کی حالت خراب ہونے پر اسے جمعہ اور ہفتہ کی درمیانی شب تقریباً12بجے ڈسٹرکٹ ہیڈکوارٹر ہسپتال لے جا کر داخل کردیا جہاں صادق علی تشدد سے ہونے والے زخموں کی تاب نہ لاتے ہوئے ہفتہ کی صبح اپنے خالق حقیقی سے جاملے پولیس تشدد اور پولیس ہی کی تحویل میں نوجوان کی ہلاکت کی خبر جنگل کی آگ کی طرح پھیل گئی اور دیکھتے ہی دیکھتے شہر میں ہنگامے پھوٹ پڑے اور آناً فاناً شہر کے تمام کاروباری مراکز بند ہوگئے اورسڑکوں سے ٹریفک غائب ہوگئی جبکہ نوجوانوں نے شہر میں داخل ہونے والے تمام راستوں کو رکاوٹیں کھڑی کرکے بند کردیا متعدد مقامات پر ہونے والے مظاہروں کے دوران انتظامیہ مردہ باد پولیس مردہ باد کے نعرے لگائے جاتے رہے یہ سلسلہ سارا دن جاری رہا جبکہ پولیس سمیت قانون نافذ کرنے والے ادارے کی طرف سے صورت حال کو کنٹرول کرنے کی کوشش کرنا تو دور کی بات ہے انہوں نے کہیں نظرآنا بھی مناسب نہ سمجھا اس طرح پولیس تشدد سے نوجوان کی ہلاکت کے باعث ہونے والی توڑ پھوڑ کے واقعات اورہنگامے تھم جانے کے بعد بھی شدید خوف وہراس اورکشیدگی کی وجہ سے سکوت کی کیفیت برقرار رہی شہر کی سڑکیں ویران اورگلیاں سنسان نظرآئیں ۔اس خطرناک صورتحال کا قابل ذکر پہلو یہ ہے کہ دیگر مکاتب فکر کے لوگوں نے انتہائی صبروتحمل کے ساتھ اس صورتحال کا سامنا کیا اور نہ صرف غیر جانب داری اوربرداشت کامظاہرہ کرتے ہوئے کوئی ردعمل ظاہر نہ کرکے کسی بھی قسم کے ممکنہ اورمتوقع ناخوشگوار صورتحال کے خطرے کو ٹال دیا جبکہ دیگر مکاتب فکر کی اہم سیاسی اورمذہبی شخصیات نے پولیس تشدد سے نوجوان کی ہلاکت کے واقعے کی مذمت کرتے ہوئے لواحقین سے اظہار ہمدردی اورذمہ داروں کے خلاف کارروائی کا بھی مطالبہ کیا دریں اثناءپولیس تشدد کے نتیجے میں جا ں بحق ہونے والے صادق علی کی نماز جنازہ مرکزی امامیہ مسجد ادا کی گئی نماز جنازہ کی ادائیگی کے بعد ہفتہ کی شام صادق علی کی میت کو ان کے آبائی گاﺅں جعفر آباد نگر2 روانہ کردیا

2 تبصرے »

  1. gilgit mai es tarh ky dushman anaser sy aman ko taba karny ke sazesh ho raha hy

    تبصرہ از qurban khan — جون 30, 2009 @ 4:38 صبح | جواب دیں

  2. or sadeq ali ky mouth per garee dok ho raha hy mulzimon ko qarar waqe saza deyni chaye.

    تبصرہ از qurban khan — جون 30, 2009 @ 4:40 صبح | جواب دیں


RSS feed for comments on this post. TrackBack URI

جواب دیں

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

آپ اپنے WordPress.com اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Twitter picture

آپ اپنے Twitter اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Facebook photo

آپ اپنے Facebook اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Google+ photo

آپ اپنے Google+ اکاؤنٹ کے ذریعے تبصرہ کر رہے ہیں۔ Log Out / تبدیل کریں )

Connecting to %s

WordPress.com پر بلاگ.

%d bloggers like this: